نیند

اے گردشِ
حیات کبھی تو دِکھا وہ نیند

جِس میں شبِ وصال کا نشّہ ہو ‘ لا وہ نیند

ہرنی سی ایک آنکھ کی مستی میں قید تھی

اِک عُمر جس کی کھوج میں پھر تا رہا ، وہ نیند

پُھو ٹیں گے اَب نہ ہونٹ کی ڈالی پہ کیا گلاب!

آئے گی اب نہ لَوٹ کے آنکھوں میں کیا ، وہ نیند !

کُچھ رَت جگے سے جاگتی آنکھوںمیں رہ گئے

زنجیر انتظار کا تھا سلسلہ ، وہ نیند

دیکھا کُچھ اِس طرح سے کِسی خُوش نگاہ نے

رُخصت ہُوا تو ساتھ ہی لیتا گیا وہ ، نیند

خُوشبو کی طرح مُجھ پہ جو بِکھری تما شب

میںاُس کی مَست آنکھ سے چُنتا رہا ‘ وہ نیند

گُھومی ہے رتجگوں کے نگر میں تمام عُمر

ہر رہگذارِ درد سے ہے آشنا ‘ وہ نیند

تُو جس کے بعد حشر کا میلہ سجائے گا !

میں جس کے انتظار میں ہُوں ‘ اے خُدا ، وہ نیند !

امجد ہماری آنکھ میں لَوٹی نہ پھر کبھی

اُس بے وفا کے ساتھ گئی بے وفا ، وہ نیند


This entry was posted in شاعرى. Bookmark the permalink.

2 Responses to نیند

  1. رنگِ حیات says:

    Bohat khoob,
     
    میںاُس کی مَست آنکھ سے چُنتا رہا ‘ وہ نیند
     
    yeh entry perh ker maza aa gaya….jaise k aap ne maire entry main se is nazm k chand shair likhe the ose terhan is entry k badle…
     
    thak ker yonhi pal bhar k liye aankh lagi thi
    so ker hi na uthein, yeh irada to nahin tha….
     
    keep posting gr8 stuff.
    Ciao

  2. رنگِ حیات says:

    Khush-amdeed (ur welcome) 😉

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s