دسمبر آن پہنچا ہے

دسمبر آن پہنچا ہے
 
 
ابھی ہجر کا قیام ہے اور دسمبر آن پہنچا ہے
یہ خبر شہر میں عام ہے دسمبر آن پہنچا ہے

آنگن میں اُتر آئی ہے مانوس سی خوشبو
یادوں کا اژدہام ہے ، دسمبر آن پہنچا ہے

خاموشیوں کا راج ہے ،خزاں تاک میں ہے
اداسی بھی بہت عام ہے ،دسمبر آن پہنچا ہے

تیرے آنے کی امید بھی ہو چکی معدوم
نئے برس کا اہتمام ہے ،دسمبر آن پہنچا ہے

خُنک رت میں تنہائی بھی چوکھٹ پہ کھڑی ہے
جاڑے کی اداس شام ہے ،دسمبر آن پہنچا ہے

تم آؤ تو مرے موسموں کی بھی تکمیل ہو جائے
نئے رُت تو سرِ بام ہے ، دسمبر آن پہنچا ہے

This entry was posted in شاعرى. Bookmark the permalink.

2 Responses to دسمبر آن پہنچا ہے

  1. Tarique says:

    يہ نہيں کہ ميری محبتوں کو کبھی خراج نہيں ملا
    مگر اتفاق کی بات ھے کوئ ھم مزاج نہيں ملا
    مجھے ايسا باغ نہيں ملا جہاں گل ھو ميری پسند کے
    جہاں ذندہ رھنے کا شوق ھو مجھے وہ سماج نہيں ملا

  2. Tarique says:

    Abdul Malik i think ur comment should be formatted i.e.
     

    يہ نہيں کہ ميری محبتوں کو کبھی خراج نہيں ملا
    مگر اتفاق کی بات ھے کوئ ھم مزاج نہيں ملا
    مجھے ايسا باغ نہيں ملا جہاں گل ھو ميری پسند کے
    جہاں ذندہ رھنے کا شوق ھو مجھے وہ سماج نہيں ملا
     
    Thanks for comment

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s