يوں ہاتھ نہيں آتا وہ گوہر ِ يک دانہ

يوں ہاتھ نہيں آتا وہ گوہر ِ يک دانہ
 
يوں ہاتھ نہيں آتا وہ گوہر ِ يک دانہ
يک رنگي و آزادي، اے ہمت ِ مردانہ

يا سنجر و طغرل کا آئين ِ جہانگيري
يا مرد ِ قلندر کے انداز ِ ملوکانہ

يا حيرت ِ فارابي، يا تاب و تب ِ رومي
يا فکر ِ حکيمانہ، يا جذب ِ کليمانہ

يا عقل کي روباہي، يا عشق ِ يد اللٰہي
يا حيلہ ِ افرنگي، يا حملہ ِ ترکانہ

يا شرع ِ مسلماني، يا دير کي درباني
يا نعرہ ِ مستانہ، کبوہ ہو کر بت خانہ

ميري ميں، فقيري ميں، شاہي ميں، غلامي ميں
کچھ کام نہيں بنتا بے جراٴت ِ رندانہ


                                        علامہ محمد اقبال

This entry was posted in شاعرى. Bookmark the permalink.

One Response to يوں ہاتھ نہيں آتا وہ گوہر ِ يک دانہ

  1. Tarique says:

    کلام اقبال ایک سمندر کی مانند ہے جس میں جو فرد جتنی گہرائی تک جائے اسے اتنے ہی گہرہائے آبدار حاصل ہوں گے۔ ان کی شاعرانہ تراکیب، ان کی تشبیہات، استعارے، تلمیہات، اشعار کی نغمگی اصلاحات ان کے صوتی تجربات، بھرپور مقصدیت کے ساتھ ان کے کلام کی شاعرانہ لطافت و صداقت، جذبہ عشق، تصور خودی، ان کا انسانی عظمت کا عقیدہ، ان کے اشعار میں شاہین کی علامت، یہ سب بحیثیت شاعر ان کی ایسی امتیازی خصوصیات ہیں جو انہیں عظیم صاحبان فن کی صف میں شامل کرتی ہیں۔علامہ اقبال ایک عہد آفرین شخصیت ہیں اور برصغیر کے مسلمانوں میں اپنے دین اور ایمان کی بنیاد پر اپنے جداگانہ تشخص کے جذبے کی بیداری اور پھر پاکستان کا قیام اس عہد آفرینی کا واضح ثبوت ہے۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s