انداز

انداز 

  بے نام وفا پہ کٹ مرنا، انداز نہيں فرزانوں کے
جو سر ميں سودا رکھتے ہيں، يہ کام ہيں ان ديوانوں کے

 
ماؤں نے تمہيں آزاد جنا، وہ زنجيريں کيوں پہنائيں؟
قيدی ہيں جہاں آزادی کے، در توڑو ان زندانوں کے
 
کشمير، فلسطين، چيچنيا کي کوئی تو روداد سنا!
جو زخمی دل کے ٹکڑے ہيں، الفاظ نہيں افسانوں کے
 
اے مومن ديکھ بصيرت سے، طاغوت کے دام سنہری ہيں
سب دھوکے ہيں اور چاليں ہيں، سمجھوتے ان شيطانوں کے
 
دو چار تو مل ہی جائيں گے، اس بزم سے ہم مايوس نہيں
جو راکھ پڑی ہے اس ميں بھی، آثار ہيں کچھ پروانوں کے
 
اے باطل تجھ کو ميداں ميں، ہم ديوانے بتلا ديں گے
تم تيغ چلانا کيا جانو، تم رسيا ہو ميخانوں کے
 
اب جيش ہمارا طيش ميں ہے، سيلاب کی صورت آئے گا
سب بام و در بہہ جائيں گے، باطل کے ان ايوانوں کے
 
 
              محمّد انور جميل 
This entry was posted in شاعرى. Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s