محسن بھوپالی کی یاد میں

بروز منگل ۱۶ جنوری 07 کو جناب محسن بھوپالی صاحب کا ایک طویل علالت کے بعد  انتقال ہوگیا اور دنیائے شعر و سخن سونی ہوگئی  ۔  

آپ کا خاندانی نام عبدالرحمٰن تھا اور آپ ۱۹۳۲ میں بھوپال میں پیدا ہوئے تھے۔ انھوں نے ایم اے  اردو اور صحافت میں کیا تھا۔ آپ نے تقریباً ۲۲ کتابیں تصنیف کی ہیں،
 

نیرنگی   سیاست  دوراں  تو   دیکھئے 

 منزل اسے ملی جو شریک سفر نہ تھا
 

محسن بھوپالی کا یہ تاریخی شعر ان کی سیاسی بصیرت  کا آئینہ دار ہی نہیں بلکہ ان کی شناخت بھی ہے۔ آپ کی ادبی خدمات نصف صدی سے زیادہ عرصے پر محیط ہے۔ آپ کے انتقال پر مختلف ادبی سیاسی مشاہیر اور شعراء نے اپنے گہرے رنج و دکھ کا اظہار کیا ہے۔ ہم ان کی مغفرت اور اہل خانہ کو صبر عطا کرنے کی دعا کرتے ہیں۔

انا للہ و انا الیہ راجعون

This entry was posted in شاعرى. Bookmark the permalink.

6 Responses to محسن بھوپالی کی یاد میں

  1. Tarique says:

    آپکی سائیٹ بھت اچھی ھے اور شاعری بھی کافی منتخب شدہ ھے- شاعروں کو بھی آپنے یاد رکھا ھے خاص کر محسن بھوپالی پہ یہ پوسٹ، اس کو پڑھ کر کچھ لکھا ھے امید ھے اپنی سائیٹ میں جگہ عطا فرمائیں گے-
     

    محسن بھوپالی صاحب طرز شاعر اور حوصلہ مند انسان تھے۔ وہ علیل رہے لیکن انہوں نے اپنی شاعری کو تمام زندگی صحت مند رکھا۔ ان کا چھوڑا ہوا شعری سرمایہ ان کی یادوں کو ہمیشہ تازہ رکھے گا۔ ممتاز ماہر تعلیم پروفیسر اعجاز احمد فاروقی نے محسن بھوپالی کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ محسن بھوپالی کی وفات کے ساتھ ہی اردو شاعری کا ایک سنہرا دور ختم ہوگیا۔ ان کی شاعری ان کی زندگی کا آئینہ ہے جو انہیں دلوں میں زندہ رکھے گی۔ ان کے بعض اشعار تو تاریخ ادب کا حصہ بن گئے ہیں۔ جنہیں نظر انداز کرکے آگے نہیں بڑھا جاسکتا۔ معروف قانون داں توقیر اے خان ایڈووکیٹ نے کہا کہ محسن بھوپالی زندہ دل انسان اور بلند پایہ شاعر تھے۔ انہوں نے پیرانہ سالی کے باوجود اپنی فکر کو جوان رکھا اور اپنے خوبصورت اشعار سے اردو ادب کی ثروت میں گراں قدر اضافہ کیا۔ انہوں نے نئے لکھنے والوں کی جس طرح سرپرستی کی وہ ان کی وسعت نظری کی روشن مثال ہے۔ علاوہ ازیں شہر کے جن علمی‘ ادبی‘ ثقافتی‘ تعلیمی اور سماجی اداروں کے عہدیداران نے محسن بھوپالی کی وفات پر اظہار تعزیت کیا۔ ان میں دائرہ ادب و ثقافت (انٹرنیشنل) کے پروفیسر سید اظفر رضوی‘ ارتقاء ادبی فورم کے ڈاکٹر محمد علی صدیقی‘ محمود واجد‘ حسن عابد‘ راحت سعید اور ڈاکٹر جعفر احمد‘ بھوپال انٹر نیشنل فورم کے عبدالحسیب خان‘ اویس ادیب انصاری اور شگفتہ فرحت‘ بزم نشور کے افضال صدیقی‘ اسحاق ہاشمی اور عزیز منصور‘ ادارہ فکرنو کے نور احمد میرٹھی‘ حلقہ فکر جدید کے حمید نور اور اقبال مجیدی‘ دبستان وارثیہ کے قمر وارثی اور ماجد خلیل‘ ساکنان شہر قائد کے اظہر عباس ہاشمی‘ عالمی ادبی فورم کے ندیم ہاشمی‘ رفاہ عام ادبی کمیٹی کے مظہر ہانی‘ نگارشات پاکستان کے پروفیسر جاذب قریشی اور سید عباس حیدر زیدی‘ اردو‘ سندھی فاؤنڈیشن کے پروفیسر آفاق صدیقی اور جمال نقوی‘ بزم سراج الادب کے سراج الدین سراج‘ بزم باران سخن کے ڈاکٹر نثار احمد نثار‘ اختر شیرانی میموریل سوسائٹی کے عبدالحمید پٹھان اور عزیز الرحمان خان‘ نوجوانان شہر کراچی کے شوکت علی عنقا‘ ادارہ آہنگ نو کے شفیق احمد شفیق اور احمد سعید فیض آبادی‘ حلقہ فکر و دانش کے صابر عظیم آبادی‘ ادارہ ذہن نو کے سمیع جمال‘ ٹونک ویلفیئر ٹرسٹ کے ابرار احمد خان ٹونگی‘ ینگ کلچرل ویلفیئر سوسائٹی کے رشید خان رشید‘ فدائی اکیڈمی کے محمد ہمایوں ظفر‘ تاج ویلفیئر ٹرسٹ کے سعید الرحمان‘ عبدالواجد خان‘ سید شہاب الدین اور انیس الرحمان نجم‘ ادارہ اظہار کی ذکیہ غزل‘ نثری دائرہ کے احمد زین الدین‘ بزم شمیم ادب کے اعجاز رحمانی اور نورالدین نور‘ ادارہ سخنور کے نقوش نقوی‘ سید نسیم الحسن زیدی اور اختر ہاشمی شامل ہیں۔
     

  2. dying2die says:

    salam
    how r u ..
    well Allah us ke darajaat buland karein aur us kay ghar waaloun ko sabr e jameeel ata karey aameeen
    take care … salam

  3. Tarique says:

    نیرنگئی سیاست دوراں تو دیکھئے، منزل انہیں ملی
    جو شریک سفر نہ تھے ، محسن بھوپالی کا یہ تاریخی شعر ان کی سیاسی بصیرت کا
    آئینہ دار ہی نہیں، ان کی شناخت بھی ہے ، اس کے علاوہ بھی انہوں نے اردو
    ادب کو کئی لازوال شعر عطا کئے، محسن بھوپالی کی ادبی خدمات نصف صدی سے
    زیادہ عرصے پر محیط ہیں وہ طبعاً نہایت ملنسار اور خوش خلق انسان تھے، وہ
    احباب کے مسائل میں خصوصی دلچسپی لیتے تھے اور ان کو حل کرکے طمانیت محسوس
    کرتے تھے ۔ محسن بھوپالی نے بھرپور ادبی زندگی گزاری ، اس دوران معرکہ
    آرائی کے مرحلے بھی آئے جن کا انہوں نے نہایت پامردی سے مقابلہ کیا وہ
    پاکستان رائٹرز گلڈ کے بنیادی ارکان میں بھی شامل تھے، وہ ادارہ یادگار
    غالب کے جوائنٹ سیکرٹری بھی رہے ۔ ایوان ادب کے صدر کی حیثیت سے انہوں نے
    مختلف شعراء کے مجموعہ کلام شائع کئے ۔محسن بھوپالی کے انتقال پر رؤف
    صدیقی، محتسب سندھ یوسف جمال، جامعہ کراچی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر
    پیرزادہ قاسم رضا صدیقی، انجمن کے صدر اعزازی جناب آفتاب احمد خاں، معتمد
    اعزازی جناب جمیل الدین عالی اور مشیر مالیات جناب اظفر رضوی اور صوبائی
    وزیر محنت، ٹرانسپورٹ، صنعت، تجارت و امداد باہمی محمد عادل صدیقی و معروف
    شاعرہ فاطمہ حسن نے گہرے صدمے اور دکھ کا اظہار کیا ۔

  4. Tarique says:

    تیرے ہر رویے میں بدگمانیاں کیسی جب تک ہے دنیا میں اعتبار دنیا کر جس نے زندگی دی ہے وہ بھی سوچتا ہو گا زندگی کے بارے میں اس قدر نہ سوچا کر۔۔ ‘محسن بھوپالی

  5. Tarique says:

    Mohsin Bhopali Source of solace

     

     For the past two months we seem to be lamenting for so many lights of our literary and social scene who have departed for their eternal abode. The latest to bow out is Mohsin Bhopali. I was lucky enough to have had a long association with him. I knew him very closely, both as a human being and as a poet. He lived an active life. Suffering from cancer for 20 years, he faced this fatal ailment courageously. He was never afraid or nervous, nor did he fall prey to self pity. He absolutely refused to yield to the blows of bad health. Mr Bhopali, till the last phase of his life, continued writing poetry and prose, participating in mushairas and other literary activities.
    Bhopali was born on September 19, 1932 in Bhopal. After Partition, he migrated to Pakistan with his family and settled in Larkana. He had received his early education in Bhopal. His family name was Abdur Rahman but in memory of one of his dearest friends in Bhopal who died very young and whose name was Mohsin, Abdur Rahman adopted Mohsin as his nom de plume. This very gesture is enough to appreciate Mohsin Bhopali’s sincerity and commitment to those he cared about. Bhopali was a committed progressive writer. He never ran after fashionable trends in literature. He was fond of finding new vistas of creativity. Combining poetry and short story (nazm + afsana) he, with the help of his friends, conceived the word ‘Nazmana’ and introduced a new form of poetry which was followed by some of his younger contemporaries. Similarly he devoted much of his time and creative energy to translations and composition of the genres of Japanese poetry such as Haiku,Vaka and Tanka.
    Romance, beauty and love are considered the basic ingredients of poetry. Bhopali, on the contrary, devoted much of his creative talent to political, social and humanistic themes. Most of his poetic expression is direct, having no ambiguity. His poetry touches sensitive hearts. Some of his verses, couplets and quatrains are popular among common people and elite alike. The following couplet has became Mohsin Bhopali’s seal of identity. 
    صحرا کی امانت ہوں سرِ کنج بہاراں
    بیٹھا ہوں بُلاوا میرا جب تک نھیں آتا
     It is on record that Sardar Abdur Rab Nishtar had recited this couplet at a huge public gathering in the mid ’50s and received great applause for it. Jamiluddin Aali has aptly termed the couplet as a ‘quotable quote’.
    Bhopali’s first collection of poetry was titled Shaksat-iShab (1961). He has 22 books of prose and poetry to his credit. He worked actively for the cause of culture and literature and was an active member of the Pakistan Writers’ Guild and was associated with Idara-i-Yadgar-i-Ghalib and the Pakistan Arts Council. He was also involved with the dramatic society, Arzhang, in which the legendary film star Muhammad Ali and his elder brother, Irshad Ali, also acted. Mohsin Bhopali was equally popular at home and abroad. He had made several visits to the UAE, USA, UK and Canada to participate in liter ary functions. This didn’t stop even after he was diagnosed of cancer. He always encouraged young people in their creative endeavours and even supervised some young editors in publishing their magazines.
    Bhopali, in the later phase of his life, wrote poetry that was more realistic and down to earth. He started composing ‘awami ghazals’ not really meant for the elite but the common people. He always wanted to keep a close link with the masses so that he could weave realism in his poetic expression. Not only was he a close spectator of society but with his poetic sensibility, he made his poetry a source of solace to suffering humanity. His own couplet describes him to perfection: His senior contemporaries such as Seemab Akbarabadi, Faiz Ahmed Faiz, Ahmed Nadeem Qasmi, Rais Amrohi and Prof Manzoor Hussain Shore respected him for his creative talent.
    ہماری جان پہ دُہرا عزاب ھے محسن
    کہ دیکھنا ہی نھیں، ہم کو سوچنا بھی ھے
     He had a varied social life in which artists, poets, singers and players were a source of inspiration to him. He was friends with them all.Bhopali took keen interest in other national languages of Pakistan especially Sindhi. He has the credit of translating the works of some very important poets of Sindhi into Urdu. Bhopali’s prose books include Hayraton ki Sarzameen, a travelogue of his tour of the United States. The other books are Naqd-i-Sukhan (critical studies) and Qaumi Yakjahti Mein Adab ka Kirdar (interviews). Faiz Ahmed Faiz thus commented on his poetry: Besides his poetic style, Mohsin Bhopali’s healthy, purposeful, realistic and humanitarian school of thought is commendable. The end for this great literary stalwart came at the age of 74. He was admitted to PNS Shifa with pneumonia where he died on Tuesday, January 16, 2007.
    نیرنگی   سیاست  دوراں  تو   دیکھئے
    منزل اسے ملی جو شریک سفر نہ تھا

  6. Tarique says:

    محسن بھوپالی کے دو مشہور غزل میں یہاں اپنی رائے میں آپ لوگوں کیلئے لکھ رھا ھوں-
     
    غلط تھے 
    غلط تھے وعدے مگر ميں يقين رکہتا تہاوہ شخض لھجہ بڑا دل نشين رکہتا تہا
    ھے تار تار مرے اعتماد کا دامنکسے بتائوں کہ ميں بھي امين رکہتا تہا
    اتر گيا ھے رگوں ميں مري لھو بن کروھ زھر ذائقہ انگبين رکہتا تہا
    گزرنے والے نہ يوں سر سري گزر دل سےمکاں شکستہ سھي پر مکين تکہتا تہا
    وھ عقل کل تہا نہلا کس کي مانتا محسنخيال خام پہ پختہ يقين تکہتا تہا
    ***********************
    خبر کيا تھي 
    خبر کيا تھي نہ ملنے کے نئے اسباب کر دے گاوھ کرکے خواب کا وعدہ مجہے بے خوابي کر دے گا
    کسي دن ديکہنا وہ آکے ميري کشت ويراں پراچٹتي سي نظر ڈالے گا اور شاداب کردے گا
    وہ اپنا حق سمجہ کر بہول جائے گا ھر احساںپھر اس رسم انا کو داخل آداب کردے گا
    نہ کرنا زعم اس کا طرز استدلال ايس ھےکہ نقش سنگ کو تحرير موج آب کردے گا
    اسير اپنے خيالوں ک ابنا کر ايک دن محسنخبر کيا تہي ميرے لئے کامياب کردے گا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s