زندگی

زندگی
 
برتر از انديشہٴ سود و زياں ہے زندگی
ہے کبھی جاں اور کبھی تسليم ِ جاں ہے زندگی

تو اسے پيمانھ ِ امروز و فردا سے نھ ناپ
جاوداں پيہم دواں، ہر دم جواں ہے زندگی

اپنی دنيا آپ پيدا کر اگر زندوں ميں ہے
سر آدم ہے، ضمير ِ کن فکاں ہے زندگی

زندگانی کی حقيقت کوہکن کے دل سے پوچھ
جوئے شير و تيشہ و سنگ گراں ہے زندگی

بندگی ميں گھٹ کے رہ جاتی ہے اک جوئے کم آب
اور آزادی ميں بحر ِ بے کراں ہے زندگی

آشکارہ ہے يہ اپنی قوت ِ تسخير سے
گرچہ اک مٹی کے پيکر ميں نہاں ہے زندگی

قلزم ہستی سے تو ابھرا ہے مانند ِ حباب
اس زياں خانے ميں تيرا امتحاں ہے زندگی

خام ہے جب تک تو ہے مٹي کا اک انبار تو
پختہ ہو جائے تو ہے شمشير ِ بے زنہار تو

This entry was posted in شاعرى. Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s