جب عشق سکھاتا ہے آداب خود آگاہي

جب عشق سکھاتا ہے آداب خود آگاہي
 
جب عشق سکھاتا ہے آداب خود آگاہي
کھلتے ہيں غلاموں پر اسرار شہنشاہي
 
عطار ہو ، رومي ہو ، رازي ہو ، غزالي ہو
کچھ ہاتھ نہيں آتا بے آہ سحر گاہي
 
نوميد نہ ہو ان سے اے رہبر فرزانہ!
کم کوش تو ہيں ليکن بے ذوق نہيں راہي

 
اے طائر لاہوتي! اس رزق سے موت اچھي
جس رزق سے آتي ہو پرواز ميں کوتاہي

 
دارا و سکندر سے وہ مرد فقير اولي
ہو جس کي فقيري ميں بوئے اسد اللہي
 
آئين جوانمردں ، حق گوئي و بے باکي
اللہ کے شيروں کو آتي نہيں روباہي 

 

 علامہ اقبال

 
This entry was posted in شاعرى. Bookmark the permalink.

17 Responses to جب عشق سکھاتا ہے آداب خود آگاہي

  1. Tarique says:

    Tariq,
    This one is AWESOME post!
    best wishes for you
    Bye

  2. Tarique says:

    نگاہ موت پہ رکھتا ہے مرد دانشمند حیات ہے شب تاریک میں شرر کی نمود
    حیات و موت نہیں التفات کے لائق فقط خودی ہے خودی کی نگاہ کا مقصود

  3. Tarique says:

    A Brilliant poem…

  4. Tarique says:

    In which language u wrote this blog?

  5. Tarique says:

    Salam,
     
    Bahtreen shairy hai, ALLAMA IQBAL ki.
    thanks for sharing.
    keep posting
     
    bye

  6. رنگِ حیات says:

    Asalam Alaikum
     
    Itnaaaayyyy Intezat ka phal kafi meetha tha.  Nice post & Thanks k time nikal ker post ker hi di😀
    Now I\’m looking forward for Aawara! (lolzzz…I know I\’m very demanding & might be annoying but….It\’s Fun)
     
    Keep posting nice stuff.
     
    Khuda hafiz

  7. Tarique says:

    بہت ديکھے ہيں ميں نے مشرق و مغرب کے ميخانے يہان ساقي نہيں پيدا، وہاں بے ذوق ہے صہبا نہ ايراں ميں رہے باقي، نہ توراں ميں رہے باقي وہ بندے فقر تھا جن کا ہلاک قيصرو کسري يہي شيخ حرم ہے جو چرا کر بيچ کھاتا ہے گليم بو ذر و دلق اویس و چادر زہرا حضور حق ميں اسرافيل نے ميری شکايت کي يہ بندہ وقت سے پہلے قيامت کر نہ دے برپا ندا آئي کہ آشوب قيامت سے يہ کيا حکم ہے گرفتہ چينياں احرام و مکي خفتہ در بطحاۓ لبلب شيشہ تہذيب حاضر ہے مے لا سے مگر ساقي کے ہاتھوں ميں نہيں پيمانہ الا دبا رکھا ہے اس کو زخمہ ور کي تيز دستي نے بہت نيچے سروں ميں ہے ابھي يورپ کا واويلا اسي دريا سے اٹھتي ہے وہ موج تند جولاں بھي نہنگون کے نشيمان جس سے ہوتے ہيں تہ و بال

  8. Unknown says:

    Salam,
    Bohat hi achi shairy publish ki he apne,
    khas tor par ye sheir
     

    اے طائر لاہوتي! اس رزق سے موت اچھي جس رزق سے آتي ہو پرواز ميں کوتاہي
     
     
    keep posting ……
    I like your blog to much🙂
    Wa Salam

  9. Tarique says:

    Good write up. I liked the writing skill

  10. Tarique says:

    it\’s very special blog for me!

  11. Unknown says:

    its awesome!… looking forward to more updates🙂

  12. Tarique says:

    Awsome mashup!!

  13. Unknown says:

    لگے رھو !

  14. Unknown says:

    Hi Tarique,
     
    This is really very nice especially the end.
     
    Marvellous Space!!!
    Regards,
    Saba

  15. Tarique says:

    BTW, What is "ایسپرجر-سینڈروم"?and when u post this one?

  16. Tarique says:

    اس قوم کو شمشیر کی حاجت نہیں رہتی

    ہو جس جو جوانوں کی خودی صورتِ فولاد !

    ناچیز جہانِ مہ و پرویں ترے آگے

    وہ عالمِ مجبور ہے تو عالمِ آزاد !

    موجوں کی تپش کیا ہے؟ فقط ذوقِ طلب ہے

    پنہاں جو صدف میں ہے وہ دولت ہے خداداد !

    شاہین کبھی پرواز سے تھک کر نہیں گرتا

    پُردم ہے اگر تو‘ تو نہیں خطرہ اُفتاد !

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s