ساقی نامہ

ساقی نامہ
 
ہؤا خیمہ زن کاروانِ بہار —- ارم بن گیا دامنِ کوہسار
گل و نرگس و سوسن و نسترن —- شہیدِ ازل لالہ خونیں کفن
جہاں چھپ گیا پردہء رنگ میں —- لہوکی ہے گردش رگِ سنگ میں
فضا نیلی نیلی ، ہوا میں‌سرور —- ٹھہرتے نہیں‌آشیاں‌میں‌طیور
وہ جوئے کہستاں‌اچکتی ہوئی —- اٹکتی، لچکتی، سرکتی ہوئی
اچھلتی، پھسلتی، سنبھلتی ہوئی —- بڑے پیچ کھا کر نکلتی ہوئی
رکے جب تو سِل چیر دیتی ہے یہ —- پہاڑوں‌کے دل چیر دیتی ہے یہ
ذرا دیکھ اے ساقئ لالہ فام —- سناتی ہے یہ زندگی کا پیام
پلادے مجھے وہ مئے پردہ سوز —- کہ آتی نہیں‌فصلِ گل روز روز
وہ مے جس سے روشن ضمیرِ حیات —- وہ مے جس سے ہے مستئ کائنات
وہ مے جس میں‌ہے سوز و سازِ ازل —- وہ مے جس سے کھلتا ہے رازِ ازلٔٔ
اٹھا ساقیا پردہ اس راز سے
لڑا دے ممومے کو شہباز سے

زمانے کے انداز بدلے گئے —- نیا راگ ہے ساز بدلے گئے
ہؤا اس طرح‌فاش رازِ فرنگ —- کہ حیرت میں‌ہے شیشہ بازِ فرنگ
پرانی سیاست گری خوار ہے —- زمیں‌میر و سلطاں‌سے بیزار ہے
گیا دورِ سرمایہ داری گیا —- تماشا دکھا کار مداری گیا
گراں‌خواب چینی سنبھلنے لگے —- ہمالہ کے چشمے ابلنے لگے
دلِ طورِ سینا و فارا‌ں دو نیم —- تجلی کا پھر منتظر ہے کلیم
مسلماں‌ہے توحید میں‌گرم جوش —- مگر دل ابھی تک ہے زنار پوش
تمدن، تصوف، شریعت، کلام —- بتانِ عجم کے پجاری تمام
حقیقت خرافات میں‌کھو گئی —- یہ امت خرافات میں کھو گئی
لبھاتا ہے دل کو کلامِ‌ خطیب —- مگر لذتِ شوق سے بے نصیب
بیا‌اس کا منطق سے سلجھا ہؤا —- لغت کے بکھیڑوں میں‌الجھا ہؤا
وہ صوفی کہ تھا خدمتِ حق میں‌مرد —- محبت میں‌یکتا حمیت میں‌فرد
عجم کے خیالات میں‌کھو گیا —- یہ سالک مقامات میں‌کھو گیا
بجھی عشق کی آگ اندھیر ہے
مسلماں‌نہیں‌راکھ کا ڈھیر ہے

شرابِ کہن پھر پلا ساقیا —- وہی جام گردش میں‌لا ساقیا
مجھے عشق کے پر لگا کر اڑا —- مری خاک جگنو بنا کر اڑا
خرد کو غلامی سے آزاد کر —- جوانوں‌کو پیروں‌کا استاد کر
ہری شاخِ ملت ترے نم سے ہے —- نفس اس بدن میں‌ترے دم سے ہے
تڑپنے پھڑکنے کی توفیق دے —- دلِ مرتضٰی سوزِ صدیق دے
جگر سے وہی تیر پھر پار کر —- تمنا کو سینوں‌میں‌بیدار کر
ترے آسمانوں کے تاروں‌کی خیر —- زمینوں کے شب زندہ داروں کی خیر
جوانوں‌کو سوز جگر بخش دے —- مرا عشق میری نظر بخش دے
مری ناؤ گرداب سے پار کر —- یہ ثابت ہے تو اس کو سیّار کر
بتا مجھ کو اسرارِ مرگ و حیات —- کہ تیری نگاہوںمیں‌ہے کائنات
مرے دیدہء تر کی بے خوابیاں —- مرے دل کی پوشیدہ بے تابیاں
مرے نالہء نیم شب کا نیاز —- مری خلوت و انجمن کا گداز
امنگیں مری آرزوئیں مری —- امیدیں مری جستجوئیں مری
مری فطرت آیئنہء روزگار —- غزالانِ افکار کا مرغزار
مرا دل مری رزم گاہِ حیات —- گمانوں کے لشکر یقیں‌کا ثبات
یہی کچھ ہے ساقی متاعِ فقیر —- اسی سے فقیری میں‌ہوں‌میںامیر
مرے قافلے میں‌لٹادے اسے
لٹادے ٹھکانے لگادے اسے

دمادم رواں‌ہے یمِ زندگی —- ہر اک شے سے پیدا رمِ‌ زندگی
اسی سے ہوئی ہے بدن کی نمود —- کہ شعلے میں‌پوشیدہ ہے موجِ دود
گراں گرچہ ہے صحبتِ آب و گِل —- خوش آئی اسے محنتِ آب و گِل
یہ ثابت بھی ہے اور سیّار بھی —- عناصر کے پھندو‌ں‌سے بیزار بھی
یہ وحدت ہے کثرت میں‌ہر دم اسیر —- مگر ہی کہیں‌بے چگوں، بے نظیر
یہ عالم، یہ بت خانہء شش جہات —- اسی نے تراشا ہے یہ سومنات
پسند اس کو تکرار کی خو نہیں —- کہ تو میں‌نہیں، اور میں‌تو نہیں
من و تو سے ہے انجمن آفریں —- مگر عین محفل میں‌خلوت نشیں
چمک اس کی بجلی میں‌تارے میں‌ہے —- یہ چاندی میں، سونے میں، پارے میں‌ہے
اسی کے بیاباں، اسی کے ببُول —- اسی کے ہیں‌کانٹے، اسی کے ہیں‌پھول
کہیں‌اس کی طاقت سے کہسار چُور —- کہیں‌اس کے پھندے میں‌جبریل و حور
کہیں‌ جرّہ شاہیں سیماب رنگ —- لہو سے چکوروں‌کے آلودہ چنگ
کبوتر کہیں‌آشیانے سے دور
پھڑکتا ہؤا جال میں‌ناصبور

 
This entry was posted in شاعرى. Bookmark the permalink.

19 Responses to ساقی نامہ

  1. Tarique says:

    Salam!Allama Iqbal will never die, he will and still lives in the hearts of all Pakistanis…he was the best!Aankh jo kuchh daikhti hay lab pay aa sakta nahinmehv-e-hairat hoon keh dunya kiya say kiya ho jaeygiKhuda hafiz🙂

  2. Tarique says:

    Hi,
    Good space.
    wo sajda, rooh e zameen jis say kaanp jati thiaaj osi ko taras rahay hain minbar o mehraab
     
    bye

  3. Tarique says:

    hi tariq,
    yeh kafi achi nazm hay.
    yaar waisay kia tum galib ko pasand nahi kartay🙂
    mainay naqsh e faryadi kahein parha tha ab nahi mil raha kia post kar sakhtay hoo.
     
    great post.
     
     
    Fuzzoom

  4. Tarique says:

    Fuzzoom تبصرے کا شکریہ
    اصل میں غالب نئے پڑھنے والوں کے عموما مشکل شاعر ہیں۔ خصوصا ان کے دیوان کا ابتدائی حصہ تو سر پر اوپر سے گزر جاتا ہے۔ ، لیکن آپکی خواھش پر میں “نقش فریادی“ پوسٹ کردوں گا۔
    میں آپکے اسپیس تک جا نھیں سکا اسلئے اپنے اسپیس میں آپکے سوال کا جواب دے رھا ھوں-

  5. Tarique says:

    His religious affiliation:Dil mein hai mujh bey Amal key Daagh-e Ishq-e Ahl-e-BaitDhoundta phirta hai Zillay Damaney Haider MujheyRooney Wala hou Shaheed-e Karbala key Ghum mein MaiKia Dur-e Gohar nah dey ghay Saqi-e Kauser Mujhey

  6. Tarique says:

    Asalam o alaikum,
     
    No doubt about it..there will not be another one like Allama Iqbal…he was a genius a man who saw far into future, well beyond any one else\’s capacity. We do miss him indeed today, evry much."jou rouhh kou turpa dayjou kulb kou gurma day""Nahin tayra nushaymun kusir-e-sultani kay gunbad purrTou Shaheen hay pusayra kur peharoun ki chitanoun pur"By the way folks my name is Shaheen-Iqbal Malikand the name was chosen by my father, whoes favourite poet Iqbal was, of course who else.
     
    Allah hafiz

  7. Hira Hanif. says:

    Mujh ko be nazar athi hay yeh buqalmuni
    Wo chand. Ye tara hay, wo pathar, yeh nagieen hay

    Deti hay meri chashme baseerat bhee ye fatwa
    Wo koh, ye darya hay, wo gardoon, ye zamin hay

    Haq bath ko lekin main chupa kar nahin raktha
    Tou hay, tujhey jo kuch nazar atha hay, nahin hay.

  8. Tarique says:

    abhi lete raho aaram se main phir aaon giisula doon gi jahan ko khawab se tumko jagaon giiALLAMAIQBAL

  9. Tarique says:

    nice space!

  10. Shobha says:

    Cool space.Thanks for ur comment!
    Take Care!

  11. Tarique says:

    kabhi aye haqiqat-e munrazir nazr aa libas-e mijaz main ke hazaron sajday tarap rahay hain teri jabeen-e niyaz main Allama Iqbal

  12. Muhammad Atif says:

    Good Evening!
    Dear firslty i want to know your name. Please tell me ur name. Secondly i want to tell you that i have been your Fannnnnnnnnnnnnnnn! and what should i do to become Fannnn no1. i really like your work specially your blog entries in urdu.
    Dear i have tried so many times to publish my entries in urdu. thats why i have tried inpage, apna that software but never succeed. please help me. and tell me how did you done this?
    please reply on this address ( bluerommance@hotmail.com )
    Thank You
    [Zeeshan Haider Jawa]

  13. Tarique says:

    Realy Great Space!

  14. Tarique says:

    This one is a pretty interesting addition.. and a good one.  It never really occured to me before, but it makes complete sense!

  15. Unknown says:

    اسلام و علیکمسب سے پہلے معزرت طلب کرتی ھوں کہ میری فرمائش پر آپ نے ساقی نامہ پوسٹ کیا۔ اور میں نے اِس پر کوئی تبصرہ بھی نہیں کیا۔ حتٰی کہ شکریہ بھی نہیں کہا۔ خیر اب کہے دیتی ھوں کہ آپ کا بہت بہت شکریہ ساقی نامہ پوسٹ کرنے کا بھی اور میری اسپیس پر مجھے مہیا کرنے کا بھی۔ میں تہہ دل سے آپ کی شکرگزار ہوں۔ میں ٹھٹہ میں رہتی ہوں یہاں میعاری کتابیں تو دور کی بات کتابیں ہی بڑی مشکلوں سے ملتی ہیں۔ آن لائن کتابیں لینےسے کافی فائدہ ہے۔ مگر یہ کافی مہنگا پڑتا ہے۔ میں ایک یا دو نطموں کے لیے پوری جِلد نہیں لے سکتی۔ایک بار پھر سے آپ کا بہت بہت شکریہ۔۔۔ اقبال کی فکرانگیز شاعری ہم سب کو مہیا کرنے کے لیے۔اللہ نگہبانصبا سیّد

  16. Tarique says:

    A Brilliant poem…

  17. Tarique says:

    Sitaroon say agay jahan aur bhi hain
    Abhi Isqh kay imtahan aur bhi hain
     
    samjhay!

  18. Tarique says:

    Maira khayal hay is pori Nazam ko sahi mainoo main layna chahyeh.
     
    Aap kay leyeh Pora Kalam Likh rahah oon iskoo Parhain aur batain kay, Kia is tarah is Nazam kay Ashar ko haam istammal kar sakhtay hain.
     
     ستاروں سے آگے جہاں اور بھي ہيں ابھي عشق کے امتحاں اور بھي ہيں تہي ، زندگي سے نہيں يہ فضائيں يہاں سينکڑوں کارواں اور بھي ہيں قناعت نہ کر عالم رنگ و بو پر چمن اور بھي آشياں اور بھي ہيں اگر کھو گيا اک نشيمن تو کيا غم مقامات آہ و فغاں اور بھي ہيں تو شاہيں ہے ، پرواز ہے کام تيرا ترے سامنے آسماں اور بھي ہيں اسي روز و شب ميں الجھ کر نہ رہ جا کہ تيرے زمان و مکاں اور بھي ہيں گئے دن کہ تنہا تھا ميں انجمن ميں يہاں اب مرے رازداں اور بھي ہيں
     
    Regards,
    Tarique kamal

  19. Tarique says:

    ختم الرسل…
     
    وہ دانائے سبل ، ختم الرسل ، مولائے کل جس نےغبار راہ کو بخشا فروغ وادي سينانگاہ عشق و مستي ميں وہي اول ، وہي آخروہي قرآں ، وہي فرقاں ، وہي يسيں ، وہي طہby Dr. Allama Muhammad Iqbal

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s