مجھے تيري نعمتوں کي خواہش نہيں

مجھے تيري نعمتوں کي خواہش نہيں
 
بے تعلق ہوں دين و دنيا سے
حب ِ ثروت، نہ فکر ِ جنت ہے
نہ مجھے شوق ِ صبح ِ آسائش
نہ مجھے ذوق ِ شام ِ عشرت ہے
نہ تو حور و قصور پر مائل
نہ تو ساقي و مے سے رغبت ہے
نہ تقاضائے منصب و جاگير
نہ تمنائے شان و شوکت ہے
کيا کروں گا ميں نعمتيں لے کر
ميري ہر سانس ايک نعمت ہے
تجھ پہ روشن ہے، اے مرے مولا!
کہ مرے دل ميں سوز ِ وحدت ہے
"تيرے انعام" کي نہيں خواہش
بلکہ مجھ کو "تري" ضرورت ہے
جوش مليح آبادي
This entry was posted in شاعرى. Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s