چاند سے، پھول سے يا ميري زباں سے سنيے

چاند سے، پھول سے يا ميري زباں سے سنيے
(ندا فاضلي)
 
چاند سے، پھول سے يا ميري زباں سے سنيے
ہر طرف آپ کا قصہ ہے جہاں سے سنيے
 
سب کو آتا نہيں دنيا کو سجا کر جينا
زندگي کيا ہے، محبت کي زباں سے سنيے
 
ميري آواز ہي پردہ ہے ميرے چہرے کا
ميں ہوں خاموش جہاں مجھ کو وہاں سے سنيے
 
کيا ضروري ہے کہ ہر پردہ اٹھايا جائے
ميرے حالات کو اپنے ہي مکاں سے سنيے
 
This entry was posted in شاعرى. Bookmark the permalink.

3 Responses to چاند سے، پھول سے يا ميري زباں سے سنيے

  1. M says:

    u r welcome janab🙂

  2. Unknown says:

    الٹی سیدھی شاعری سے بھتر ھے تم خاموش رھو

  3. Unknown says:

    میری بھی سمجھ میں کچھ نھیں آیا!

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s