من چلے کا سودا

من چلے کا سودا
——————————————————————————-
اشفاق احمد کے اس ناول کے وجود میں آنے کا تعلق ان دو مثبت اور منفی تارون سے بندھا ہے جن میں سے ایک کا سر چشمہ تصوف اور عرفان ہے اور دوسرے کا منبع سائنس خاص طور پر فزکس اور فزکس میں سے بھی کوٹنم تھیوری کے ساتھ وابستہ ہے ۔
اشفاق احمد کہتے ہیں کہ کوئی گیارہ ساڑھے گیارہ برس تک ایک مجتحس نویسندہ کی حیثیت سے میں نوروالوں کے ڈیرے پر باقادعدگي سے سے حاضری دیتا رہا اور سائیں فضل شاہ صاحب رحمتہ اللہ علیہ کے ارشادات سمجھنے کی کوشش کرتا رہا۔ اس سے تقریبا دگنی مدت تک اردو سائنس بورڈ میں ان مسودوں کی ورق گردانی پر مامور رہاجن کا براہ راست تعلق سائنس کے مختلف موضوعات سے تھا ان دونوں رسمی تعلقات سے مجھ پر کچھ ایسے عقدے کھلے جن سے میں محض ادب کے میدان میں رہ کر روشناس ہو سکتا تھا۔  
——————————————————————————–
ڈیرے کے لنکرخآنے کی کچی دیوار سے ڈھولگآ کر سوچتے ہوۓ اور دفتر میں سائنسی کتابوں کی پروف ریڈنگ کرتے ہوۓ ایک بات اندر اور باہر پورا اور باہر پورا بو جھ ڈال کر مجھ پر لٹکی ہوئی تھی کہ اصل حقیقت بٹی ہوئی نہیں ہے ۔ اس کے جو قطعے ٹکڑے اور اجزاء الگ الگ نظر آتے ہیں ایک ہی کل کا حصہ ہیں صوفیوں کا علم ایک ایسا ابدی اور عرفانی علم ہے جسے نہ تو عقل و دانش اور دلیل و برہان کے ترازو میں تولا جاسکتاہے  اور نہ ہی الفاظ میں بیان کیاجاسکتاہے  ۔ اس ابدی علم کے اندرجدید فزکس کی جوابدی شاخ اپنے طے شدہ مقام سے گزررہی ہےاس کوبھی گہرے مراقبے اور ڈائریکٹ حسی بصیری اور ذآتی مشاہدے سے اسی طرح آنکاجاسکتاہے جس طرح جدید آلات سے فزکس کے مفروضات جانچے جاسکتےہیں۔  جب فزکس کے پروفیسروں اور باطن کے مسافروں کے تجربات میں ایک متوازی ہم آہنگی کا احساس ہوتاہے  تو حیرانی اس پر نہیں ہوتی کہ اس قدر قریبی مشابہت اور ایسی ہم آہنگی کا اچانک علم ہوگیا بلکہ سوال یہ پیدا ہوتاہے کہ دو مختلف النوع ڈسپلنوں میں یہ ہم آہنگی اور ایسی مماثلت کیوں پیدا ہوئی اور اس کے پیچھے کون سی عوامل کار فرماہيں۔ یوں تو زندگی کے اسرار نہانی جاننے کے لیے صرف صوفیوں اور سائنس دانوں نے ہی کوشش نہيں کی بلکہ شاعروں منجموں مجذوبوں بچو مسخروں اور پانسہ بھینکنے والوں نے بھی کچھ نتیجے نکالے ہيں اور بڑی دقیق باتيں کی ہیں لیکن یہ ساری باتیں زندگی اور کائنات کی تشریح اور توضیح سے تعلق رکھتی ہیں اس کے اندر کا بھید بھاو نہيںبتاتیں۔
 
اس ناول کے بارے میں اور بھی کچھ لکھوں گا انشا الله
This entry was posted in ناول ڈرامہ. Bookmark the permalink.

4 Responses to من چلے کا سودا

  1. Unknown says:

    Tarique! tum yeh ajeeb ajeeb say Navil kab say parhnay lagay hoo???

  2. Unknown says:

    Assalam-U-Alaikum Tarique,Jab say mainay dekha kay tum MSN Space likh rahay hoo bari heirat huwi hay!Kahan say tumharay pass itna Time agaya????????? :)Lekin yaar likh bohat acha rahay hoo…Yaad hay Cyber main ham donoo kitni tafreeh kartay thay Dosray loggon kay blogs main jakar aur ultay sedhay question and answer kar kar kay……..Baray achay din thay.bhar haal keep it up.Abdullah

  3. Tarique says:

    Tarique Sirf tumharay leyeh bari mahnat say likha hay aur tumhay mail bhi kia hay.Faiz Ahmed Faiz Bahar بہار آئی تو جیسے اک بار۔۔۔۔بہار آئی تو جیسے اک بارلوٹ آئے ہیں پھر ادم سےوہ خواب سارے، شباب سارےجو تیرے ہونٹوں پہ مر مٹے تھےجومٹ کر ہر با ر پھر جیئے تھےنکھر گئے ہیں گلاب سارےجو تیری یادوں سے مشکبو ہیںجوتیرے عُشاق کا لہو ہیںابل پڑے ہیں عذاب سارےملالِ احوالِ دوستاں بھیخُمارِ آغوشِ مہوِشاں بھیغُبارِ خاطر کے باب سارےتیرے ہمارےسوال سارے، جواب سارےبہار آئی تو کھل گئے ہیںنئے سرے سے حساب سارے۔۔۔۔فیض احمد فیض۔۔۔Faiz Ahmed Faiz, Bahar

  4. Afifa says:

    کبھى ﻳﮧاں تمﮧﻳں ڈھونڈھا کبھى وھاں پﮧنچاتمﮧارى دﻳد کى خاطر کﮧاں کﮧاں پﮧنچاغرﻳب مٹ گﺋے پامال ھو گﺋے لﻳکن کسى تلک نﮧ تﻳرا آج تک نشاں پﮧنچاھو بھى نﮧﻳں اور ھر جا ھوھو بھى نﮧﻳں اور ھر جا ھو تم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔تم اک گورکھ دھنده ھوھر ذرے مﻳں کس شان سے تو جلوه نما ھےحﻳراں ھے مگر عقل کﮧ کﻳسا ھے تو کﻳا ھےتم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوتجھے دﻳر و حرم مﻳں مﻳں نے ڈھونڈھا تو نﮧﻳں ملتامگر تشرﻳف فرما تجھکو اپنے دل مﻳں دﻳکھا ھےتم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوڈھونڈے نﮧﻳں ملے ھو نﮧ ڈھونڈے سے کﮧﻳں ، تماور پھر ﻳﮧ تماشا ھے جﮧاں ھم ھﻳں وھﻳں تمتم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوجب بجز تﻳرے کوﺋى دوسرا موجود نﮧﻳںپھر سمجھ مﻳں نﮧﻳں آتا تﻳرا پرده کرنا تم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔حرم و دﻳر مﻳں ھے جلوه پر فن تﻳرادو گھروں کا ھے چراغ اک رخ روشن تﻳرا تم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔جو الفت مﻳں تمﮧارى کھو گﻳا ھےجو الفت مﻳں تمﮧارى کھو گﻳا ھےاسى کھوﺋے ھوﺋے کو کچھ ملا ھےاسى کھوﺋے ھوﺋے کو کچھ ملا ھےنﮧ بت خانے نﮧ کعبے مﻳں ملا ھے مگر ٹوٹے ھوﺋے دل مﻳں ملا ھےعدم بن کر کﮧﻳں تو چھپ گﻳا ھےکﮧﻳں تو ھست بن کر آ گﻳا ھےنﮧﻳں ھے تُو تو پھر انکار کﻳسانفى بھى تﻳرے ھونے کا پتﮧ ھےمﻳں جس کو کﮧﮧ رھا ھوں اپنى ھستى اگر وه تو نﮧﻳں تو اور کﻳا ھےنﮧﻳں آﻳا خﻳالوں مﻳں اگر تُوتو پھر مﻳں کﻳسے سمجھا تُو خدا ھےتم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوحﻳران ھوں اس بات پﮧ تم کون ھو کﻳا ھوھاتھ آٶ تو بت ھاتھ نﮧ آٶ تو خدا ھوتم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوعقل مﻳں جو گھر گﻳا لا انتﮧا کﻳوں کر ھواجو سمجھ مﻳں آگﻳا پھر وه خدا کﻳوں کر ھواتم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوفلسفى کو بحث کے اندر خدا ملتا نﮧﻳںڈور کو سلجھا رھا ھے اور سِرا ملتا نﮧﻳںپتﮧ ﻳوں تو بتا دﻳتے ھو سب کو لا مکاں اپناتعجب ھے مگر رھتے ھو تم ٹوٹے ھوﺋے دل مﻳںتم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوجبکﮧ تجھ بن نﮧﻳں کوﺋى موجودجبکﮧ تجھ بن نﮧﻳں کوﺋى موجودپھر ﻳﮧ ھنگامﮧ اے خدا کﻳا ھےتم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوچھپتے نﮧﻳں ھو سامنے آتے نﮧﻳں ھو تمجلوه دکھا کے جلوه دکھاتے نﮧﻳں ھو تمدﻳر و حرم کے جھگڑے مٹاتے نﮧﻳں ھو تمجو اصل بات ھے وه بتاتے نﮧﻳں ھو تمحﻳراں ھوں مﻳرے دل مﻳں سماﺋے ھو کس طرححالاں کﮧ دو جﮧاں مﻳں سماتے نﮧﻳں ھو تمﻳﮧ مابعد و حرم ﻳﮧ کلﻳسا و دﻳر کﻳوںھرجاﺋى ھو جبھى تو بتاتے نﮧﻳں ھو تمتم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھودل پﮧ حﻳرت نے عجب رنگ جما رکھا ھےاﻳک الجھے ھوﺋى تصوﻳر بنا رکھا ھےکچھ سمجھ مﻳں نﮧﻳں آتا کﮧ ﻳﮧ چکر کﻳا ھےکھﻳل کﻳا تم نے ازل سے ﻳﮧ رچا رکھا ھےروح کو جسم کے پنجرے کا بنا کر قﻳدى اس پﮧ پھر موت کا پﮧرا بھى بٹھا رکھا ھےدے کے تدبﻳر کے پنچھى کو اڑانﻳں تم نےدامِ تقدﻳر مﻳں ھر سمت بچھا رکھا ھےکر کے آراﺋشﻳں کونﻳن کى برسوں تم نےختم کرنے کا بھى منصوبﮧ بھى بنا رکھا ھےلامکانى کا بﮧرحال ھے دعوٰى بھى تمﮧﻳںنحنُ اقرب کا بھى پﻳغام سنا رکھا ھےﻳﮧ براﺋى وه بڑھاﺋى ، ﻳﮧ جﮧنم وه بﮧشتاس الٹ پھﻳر مﻳں فرماٶ تو کﻳا رکھا ھےجرم آدم نے کﻳا اور سزا بﻳٹوں کوعدل و انصاف کا معﻳار بھى کﻳا رکھا ھےدے کے انسان کو دنﻳا مﻳں خلافت اپنى اک تماشا سا زمانے مﻳں بنا رکھا ھےاپنى پﮧچان کى خاطر ھے بناﻳا سب کوسب کى نظروں سے مگر خود کو چھپا رکھا ھےتم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھونت نﺋے نقش بناتے ھو مٹا دﻳتے ھوجانے کس جرمِ تمنا کى سزا دﻳتے ھوکبھى کنکر کو بنا دﻳتے ھو ھﻳرے کى کنى کبھى ھﻳروں کو بھى مٹى مﻳں ملا دﻳتے ھوزندگى کتنے ھى مردوں کو عطا کى جس نےوه مسﻳحا بھى صلﻳبوں پﮧ سجا دﻳتے ھوخواھشِ دﻳد جو کر بﻳٹھے سرِ طور کوﺋىطور ھى برقِ تجلى سے جلا دﻳتے ھونارِ نمرود مﻳں ڈلواتے ھو خود اپنا خلﻳلخود ھى پھر نار کو گلزار بنا دﻳتے ھوچاھے کنعان مﻳں پھﻳنکو کبھى ماهِ کنعاںنور ﻳعقوب کى آنکھوں کا بجھا دﻳتے ھوبﻳچو ﻳوسف کو کبھى مصر کے بازاروں مﻳںآخر کار شهِ مصر بنا دﻳتے ھوجذب و مستى کى جو منزل پﮧ پﮧنچتا ھے کوﺋىبﻳٹھ کر دل مﻳں انا الحق کى صدا دﻳتے ھوخود ھى لگواتے ھو پھر کفر کے فتوے اس پرخود ھى منصور کو سولى پﮧ چڑھا دﻳتے ھواپنى ھستى بھى وه اک روز گنوا بﻳٹھتا ھےاپنے درشن کى لگن جس کو لگادﻳتے ھوکوﺋى رانجھا جو کبھى کھوجنے نکلے تم کوتم اسے جھنگ کے بﻳلے مﻳں رلا دﻳتے ھوجستجو لے کے جو تمﮧارى چلے قﻳس کوﺋىاس کو مجنوں کسى لﻳلٰى کا بنا دﻳتے ھوجوت سسى کے اگر من مﻳں تمﮧارى جاگےتم اسے تپتے ھوﺋے تھل مﻳں جلا دﻳتے ھوسوھنى گر تم کو ماھﻳوال تصور کر لے اس کو بپھرى ھوﺋى لﮧروں مﻳں بﮧا دﻳتے ھوخود جو چاھو تو سرِ عرش بلا کر محبوباﻳک ھى رات مﻳں معراج کرا دﻳتے ھوتم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔تم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوآپ ھى اپنا پرده ھوآپ ھى اپنا پرده ھوآپ ھى اپنا پرده ھوتم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوجو کﮧتا ھوں مانا تمﮧﻳں لگتا ھے برا ساپھر بھى ھے مجھے تم سے بﮧر حال گلﮧ ساچپ چاپ رھے دﻳکھتے تم عرشِ برﻳں پرتپتے ھوﺋے کربل مﻳں محمد کا نواساکس طرح پلاتا تھا لﮧو اپنا وفا کوخود تﻳن دنوں سے وه اگرچﮧ تھا پﻳاسادشمن تو بﮧرطور تھے دشمنمگر افسوس تم نے بھى فراھم نﮧ کﻳا پانى ذرا ساھر ظلم کى توفﻳق ھے ظالم کى وراثتمظلوم کے حصے مﻳں تسلى نﮧ دلاساکل تاج سجا دﻳکھا تھا جس شخص کے سر پرھے آج اسى شخص کے ھاتھوں مﻳں ھى کاساﻳﮧ کﻳا ھے اگر پوچھوں تو کﮧتے ھو جواباًاس راز سے ھو سکتا نﮧﻳں کوﺋى شناساتم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوحﻳرت کى اک دنﻳا ھوتم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔تم اک گورکھ دھنده ھوھر اﻳک جا پﮧ ھو لﻳکن پتﮧ نﮧﻳں معلومھر اﻳک جا پﮧ ھو لﻳکن پتﮧ نﮧﻳں معلومتمﮧارا نام سنا ھے نشاں نﮧﻳں معلومتم اک گورکھ دھنده ھودل سے ارماں جو نکل جاﺋے تو جگنو ھو جاﺋےاور آنکھوں مﻳں سمٹ آﺋے تو آنسو ھو جاﺋےجاپ ﻳا ھو کا جو دے ھو کرے ھو مﻳں کھو کراس کو سلطانﻳاں مل جاﺋﻳں وه باھو ھو جاﺋےبال بﻳکا نﮧ کسى کا ھو چھرى کے نﻳچےحلقِ اصغر مﻳں کبھى تﻳر ترازو ھو جاﺋےتم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوکس قدر بے نﻳاز ھو تم بھىداستانِ دراز ھو تم بھىتم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔تم اک گورکھ دھنده ھوراهِ تحقﻳق مﻳں ھر گام پﮧ الجھن دﻳکھوںوھى حالات و خﻳالات مﻳں ان بن دﻳکھوںبن کے ره جاتا ھوں تصوﻳر پرﻳشانى کىغور سے جب بھى کبھى دنﻳا کا درپن دﻳکھوںاﻳک ھى خاک پﮧ فطرت کے تضادات اتنےاتنے حصوں مﻳں بٹا اﻳک ھى آنگن دﻳکھوںکﮧﻳں زحمت کى سلگتى ھوﺋى پت جھڑ کا سماںکﮧﻳں رحمت کے برستے ھوﺋے ساون دﻳکھوںکﮧﻳں پھنکارتے درﻳا کﮧﻳں خاموش پﮧاڑکﮧﻳں جنگل کﮧﻳں صحرا کﮧﻳں گلشن دﻳکھوںخوں رلاتا ھے ﻳﮧ تقسﻳم کا انداز مجھےکوﺋى دھنوان ﻳﮧاں پر کوﺋى نردھن دﻳکھوںدن کے ھاتھوں مﻳں فقط اﻳک سلگتا سورجرات کى مانگ ستاروں سے مزﻳن دﻳکھوںکﮧﻳں مرجھاﺋے ھوﺋے پھول ھﻳں سچاﺋى کےاور کﮧﻳں جھوٹ کے کانٹوں پﮧ بھى جوبن دﻳکھوںشمس کى کھال کﮧﻳں کھچتى نظر آتى ھےکﮧﻳں سرمد کى اترتى ھوﺋى گردن دﻳکھوںرات کﻳا شے ھے سوﻳرا کﻳا ھےرات کﻳا شے ھے سوﻳرا کﻳا ھےﻳﮧ اجالا ﻳﮧ اندھﻳرا کﻳا ھےﻳﮧ اجالا ﻳﮧ اندھﻳرا کﻳا ھےمﻳں بھى ناﺋب ھوں تمﮧارا آخر۔۔۔ مﻳں بھى ناﺋب ھوں تمﮧارا آخرکﻳوں ﻳﮧ کﮧتے ھو کﮧ تمﮧارا کﻳا ھےتم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھودﻳکھنے والا تجھے کﻳا دﻳکھتا تو نے ھر ھر ڈھنگ سے پرده کﻳاتم اک گورکھ دھنده ھومسجد مندر ﻳﮧ مﻳخانےکوﺋى ﻳﮧ مانے وه مانےمسجد مندر ﻳﮧ مﻳخانےکوﺋى ﻳﮧ مانے وه مانےسب تﻳرے ھﻳں جاناں کاشانےکوﺋى ﻳﮧ مانے وه مانےاک ھونے کا تﻳرے قاﺋل ھےانکار پﮧ کوﺋى ماﺋل ھےعصبﻳت لﻳکن تو جانےکوﺋى ﻳﮧ مانے وه مانےاک خلق مﻳں شامل کرتا ھےاک سب سے اکﻳلا رھتا ھےھﻳں دونوں تﻳرے مستانےکوﺋى ﻳﮧ مانے وه مانےسب ھﻳں جب عاشق تمﮧارے نام کےسب ھﻳں جب عاشق تمﮧارے نام کےکﻳوں ﻳﮧ جھگڑے ھﻳں رحﻳم و رام کےتم اک گورکھ دھنده ھودﻳر مﻳں تُو حرم مﻳں تُودﻳر مﻳں تُو حرم مﻳں تُوعرش پﮧ تُو زمﻳں پﮧ تُودﻳر مﻳں تُو حرم مﻳں تُوعرش پﮧ تُو زمﻳں پﮧ تُوجس کى پﮧنچ جﮧاں تلک اس کے لﺋے وھﻳں پﮧ تُوتم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔تم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھوھر اک رنگ مﻳں ﻳکتا ھوھر اک رنگ مﻳں ﻳکتا ھوتم اک گورکھ دھنده ھو۔۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھو ۔۔ تم اک گورکھ دھنده ھومرکزِ جستجو عالمِ رنگ و بومرکزِ جستجو عالمِ رنگ و بودم بﮧ دم جلوه گر تُو ھى تُو چار سودم بﮧ دم جلوه گر تُو ھى تُو چار سوھو کے ماحول مﻳں کچھ نﮧﻳں اِﻻ ھوھو کے ماحول مﻳں کچھ نﮧﻳں اِﻻ ھوتم بﮧت دلربا تم بﮧت خوبروتم بﮧت دلربا تم بﮧت خوبروعرش کى عظمتﻳں فرش کى آبروعرش کى عظمتﻳں فرش کى آبروتم ھو کونﻳن کا حاصلِ آرزوتم ھو کونﻳن کا حاصلِ آرزوآنکھ نے کر لﻳا آنسوٶں سے وضوآنکھ نے کر لﻳا آنسوٶں سے وضواب تو کر دو عطا دﻳد کا اک سبوآٶ پردے سے تم آنکھ کے روبروچند لمحے ملن دو گھڑى گفتگوناز جپتا پھرے جا بجا کو بﮧ کووحدهُ وحدهُ وحدهُ وحدهُﻻ شرﻳک لهُ ﻻ شرﻳک لهُﻻ شرﻳک لهُ ﻻ شرﻳک لهُﷲ ھو ﷲ ھو ﷲ ھو ﷲ ھولﻳکن اسے سننے کا مزه ھے اگر آپ اس کى CD ﻳا کﻳسٹ لے کر سنﻳں تو ۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s