کوئی بات کرو

کوئی بات کرو
 
 
کوئی بات کرو
کوئی خوشبو جیسی بات کرو

بارش نے دریچے پہ آکےدستک دی ہے
ہر سُو بھیگے پیڑوں کی خوشبو پھیلی ہے

ہے سونا بن کے پھیلی دھوپ نظاروں پر
وہ چاندی جیسی برف جمی کوہساروں پر

ساحل پہ کہیں جب لہریں جھاگ اڑاتی ہوں
جب رنگیں بہاریں پھولوں کو لہراتی ہوں

تم کوئی سُہانی بات کرو
کوئی بات کرو

This entry was posted in شاعرى. Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s